26

لمبی اور صحت مند زندگی کے لیے سات نکات

|Seven Tips For A Long And Healthy Life

لمبی اور صحت مند زندگی کے لیے سات نکات

جدید طبی ٹیکنالوجی جتنی اچھی ہے، یہ آپ کو غیر صحت بخش طرز زندگی کی وجہ سے پیدا ہونے والی پریشانیوں سے کبھی نہیں بچا سکتی۔ لمبی اور صحت مند زندگی کے لیے ہر مسئلے کا جدید طبی علاج کروانے کے بجائے اس طرح زندگی گزارنا کہیں بہتر ہے کہ آپ شاید ہی کبھی بیمار پڑیں۔روک تھام کا ایک اونس یقینی طور پر ایک پونڈ علاج سے بہتر ہے۔ لمبی اور صحت مند زندگی گزارنے کے طریقے سے متعلق سات نکات یہ ہیں۔ اس کے علاوہ، وہی طرز زندگی جو آپ کو بیماری سے بچنے میں مدد دیتا ہے، وزن کم کرنے میں بھی مدد کرتا ہے۔

کافی ورزش کریں۔

ماضی میں لوگوں کو اپنے معمول کے کام کے دوران اپنے جسمانی جسم کا استعمال کرنا پڑتا تھا۔ لیکن آج ہو سکتا ہے کوئی اٹھے، گاڑی میں کام پر جائے، پھر بیٹھ جائے، گاڑی میں گھر جانے کے لیے اٹھے اور گھر پہنچ کر دن کے باقی حصے میں دوبارہ بیٹھ جائے۔ ایسی زندگی میں جسمانی مشقت نہیں ہوتی۔ یہ جسمانی بے عملی کئی بیماریوں کی ایک بڑی وجہ ہے۔ کھیل، دوڑنا۔ چہل قدمی اور دیگر چیزوں کو ہماری زندگی میں شامل کرنا ضروری ہے اگر ہمارے عام کام کے لیے ہمیں جسمانی طور پر محنت کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ میں

لمبی اور صحت مند زندگی جب آپ کو نیند آتی ہے تو سو جائیں۔

یہ بات سادہ لگ سکتی ہے، لیکن بہت سے لوگ دیر تک جاگتے ہیں یہاں تک کہ جب ان کا جسم انہیں بتا رہا ہو کہ سونے کا وقت ہو گیا ہے۔ یوگا اور آیورویدک ڈاکٹر بھی کہتے ہیں کہ رات کو سونا اور دن میں متحرک رہنا بہتر ہے۔ تاہم، طلباء جیسے لوگ رات گئے تک مطالعہ کرنے کے لیے کافی اور محرکات لیں گے۔ دوسرے رات کو متحرک رہنے اور دن میں سونے کی عادت پیدا کرتے ہیں۔ جب کہ ہم یہ کر سکتے ہیں، یہ بالآخر صحت پر اثر انداز ہوتا ہے۔ متبادل صحت کے ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ اس قسم کی غیر فطری زندگی کینسر اور دیگر بیماریوں کا سبب بننے والے عوامل میں سے ایک ہے۔

جب آپ کو بھوک لگے تو کھائیں۔

یہ بھی ایک سادہ خیال ہے، لیکن ایک بار پھر ہم اکثر جسم کے پیغامات کے خلاف جاتے ہیں۔ اگر آپ عادت سے ہٹ کر یا سماجی دباؤ کی وجہ سے دن کے مخصوص وقت میں کھاتے ہیں، یہاں تک کہ جب آپ کو حقیقی بھوک نہ لگتی ہو، تب بھی آپ اپنا کھانا ٹھیک سے ہضم نہیں کر پائیں گے۔ تیزابیت اور بدہضمی شروع ہوتی ہے اور اس سے دیگر پیچیدہ بیماریوں کے جڑ پکڑنے کے امکانات بڑھ جاتے ہیں۔ بھوک لگنا درحقیقت اچھی صحت کی علامت ہے لیکن اگر آپ کو بھوک نہ لگ رہی ہو تو آپ تھوڑا انتظار کریں اور پھر کھانا کھائیں۔ (اگر آپ کو مناسب وقت کا انتظار کرنے کے بعد بھی بھوک نہیں لگتی ہے تو آپ کو ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہیے کیونکہ کچھ غلط ہے۔)

باقاعدہ، منظم بنیادوں پر تیز

اگر آپ کسی سے کہیں گے کہ سال میں 365 دن بغیر کسی آرام کے کام کریں تو وہ شکایت کریں گے اور کہیں گے کہ انہیں آرام کرنا چاہیے ورنہ ٹوٹ جائیں گے۔ لیکن ہم نے کبھی اپنے ہاضمے کے اعضاء کے بارے میں پوچھنے یا سوچنے کی زحمت نہیں کی جو ہم بغیر آرام کے دن بہ دن کام کرنے پر مجبور ہیں۔ وہ اس طرح احتجاج نہیں کر سکتے جس طرح کوئی شخص اپنے باس سے کرتا ہے، لیکن وہ ہمیں یہ اشارہ دیتے ہیں کہ وہ بلا روک ٹوک کام نہیں کر سکتے۔ جب ہم ان اشاروں کو نظر انداز کرتے ہیں اور پھر بھی انہیں کام کرنے پر مجبور کرتے ہیں تو وہ اعضاء ٹوٹ جاتے ہیں۔ اس لیے متواتر روزے ضروری ہیں۔ پورے ایک دن کھانے سے پرہیز کریں۔ اس سے آپ کے ہاضمے کے اعضاء کو آرام ملتا ہے اور آپ کے جسم سے فضلہ کے اخراج میں بھی مدد ملتی ہے۔ باقاعدگی سے روزہ رکھنے سے انسان کو فکری یا روحانی کاموں کے لیے اضافی وقت مل جاتا ہے۔ روزہ غار میں رہنے والوں کے لیے نہیں ہے، بلکہ ایک سمجھدار عمل ہے جس پر کوئی بھی عمل کر سکتا ہے۔

لمبی اور صحت مند زندگی کے لیےسونے سے پہلے ٹھنڈے پانی سے دھو لیں۔

جیسا کہ اوپر بتایا گیا ہے کہ صحت کو برقرار رکھنے کے لیے مناسب نیند ضروری ہے۔ اگر آپ سونے سے پہلے اپنے اہم موٹر اور حسی اعضاء (ہاتھ، بازو، آنکھیں، ٹانگیں، منہ، جنسی اعضاء) کو ٹھنڈے پانی سے دھوتے ہیں، تو اس سے آپ کو سکون ملے گا اور آپ گہری نیند کے لیے تیار ہوں گے۔

باقاعدگی سے مراقبہ کریں۔

آپ کا جسم آپ کے دماغ سے جڑا ہوا ہے۔ اس دور کی بہت سی بیماریاں نفسیاتی ہیں۔ تناؤ اور اضطراب ہماری جسمانی صحت پر اثر انداز ہوتے ہیں۔ مراقبہ ایک ذہنی مشق ہے جو دوسری چیزوں کے علاوہ آپ کو زندگی کی پریشانیوں سے خود کو الگ کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ ایک آسان تکنیک سیکھیں اور اسے باقاعدگی سے کریں۔

ہر روز جلدی اٹھیں۔

ایک بار پھر پرانی کہاوت، “جلد سونے، جلدی اٹھنا انسان کو صحت مند، دولت مند اور عقلمند بناتا ہے۔” مجھے نہیں معلوم کہ یہ آپ کو دولت مند بنائے گا، لیکن یہ آپ کو صحت مند ضرور بنائے گا۔ آپ کے جسم کو کافی نیند کی ضرورت ہے، نہ بہت زیادہ اور نہ بہت کم۔

ان تجاویز پر عمل کریں اور آپ غلط نہیں ہو سکتے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں